News

جاپانی وزیرِ اعظم ایران کے دورے پر، کیا جاپان ایران اور امریکہ کے درمیان ثالثی کرا سکتا ہے؟

By  | 
تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption کیا شانزو آبے تہران کو قائل کر پائیں گے

جاپان کے وزیرِ اعظم شنزو آبے ایران کا دورہ شروع کر رہے ہیں جس میں وہ کوشش کریں گے کہ تہران اور واشنگٹن کے درمیان شدید تناؤ کو کم کیا جا سکے۔

ٹوکیو سے نکلتے ہوئے انھوں نے کہا کہ انھیں توقع ہے کہ ایران کے سربراہان بشمول آیت اللہ خامنئی کے ساتھ ان کی بات چیت دوستانہ ماحول میں کھل کر ہو گی۔

صدر ٹرمپ نے حال ہی میں وزیرِ اعظم آبے کے ایران کے ساتھ معاملات میں مدد کے امکان کا بظاہر خیر مقدم کیا تھا۔

تاہم مبصرین کو اس بات پر شبہ ہے کہ اس سے حقیقت میں کچھ حاصل بھی ہو گا یا نہیں۔

یہ بھی پڑھیئے

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

ایران جوہری معاہدہ تھا کیا اور اس کے کیا فوائد تھے؟

ایران پر پابندیوں سے استثنیٰ کی یورپی درخواست مسترد

’ٹرمپ کو ایران جوہری معاہدہ ختم نہیں کرنے دیں گے‘

’ایران کے ساتھ جوہری معاہدہ ختم کرنا تباہ کن ہوگا‘

ان کا کہنا ہے کہ یہ ممکن ہے کہ آنے والے انتخابات میں یہ دورہ شنزو آبے کی عالمی سیاست دان کی شبیہ بہتر بنانے میں مدد دے۔

شنزو آبے گذشتہ چار دہائیوں میں ایران کا دورہ کرنے والے پہلے جاپانی وزیرِ اعظم ہوں گے۔

آبے ایران کیوں جا رہے ہیں؟

جاپان اور ایران اس سال سرکاری طور پر سفارتی تعلقات کی 90 ویں سالگرہ منا رہے ہیں۔

یہ دورہ اس لیے بھی اہم ہے کہ یہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے جاپان کے سرکاری دورے کے فوراً بعد شروع کیا جا رہا ہے۔

امریکہ اور ایران کے درمیان گذشتہ سال تناؤ اس وقت بڑھنا شروع ہو گیا تھا جب صدر ٹرمپ نے اس معاہدہ کو منسوخ کر دیا جس میں ایران جوہری پروگرام کو روکنے کے لیے رضامند ہو گیا تھا۔

اس کے بعد سے امریکیوں نے تہران پر سخت اقتصادی پابندیاں لگائی ہیں اور خلیج میں فوجی موجودگی بڑھا دی ہے۔

ایران کا جوہری معاہدہ کیا تھا؟

سنہ 2015 میں ایران نے اقتصادی پابندیاں اٹھانے کے بدلے اپنے جوہری پروگرام کو محدود کرنے پر رضا مندی ظاہر کر دی تھی۔

یہ معاہدہ اوباما انتظامیہ نے کیا تھا لیکن گذشتہ سال ٹرمپ انتظامیہ نے اس کو منسوخ کر دیا۔

امریکہ نے اس کے بعد یکطرفہ طور پر ایران پر پابندیاں لگا دیں جبکہ 2015 میں کیے جانے والے معاہدے میں حصہ لینے والے دیگر فریقوں (یورپی یونین، روس، اور چین) کی ابھی بھی کوشش ہے کہ معاہدہ قائم رہے۔

اقتصادی پابندیوں کے ردِ عمل کے طور پر گذشتہ ماہ ایران نے اعلان کیا تھا کہ وہ معاہدے کی کچھ خلاف ورزی کرے گا۔

منگل کو آئی اے ای اے نے کہا کہ ایران نے افژودہ یورینیئم کی پیداوار میں اضافہ کر دیا ہے تاہم یہ واضح نہیں ہے کہ وہ 2015 کی طے شدہ حد تک کب پہنچے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption ٹرمپ نے امریکہ کی سفارت کاری کو اس کے بعض قریبی اتحادیوں سے تصادم کے موڑ پر لا کھڑا کیا ہے

اس سے جاپان کو کیا فرق پڑتا ہے؟

ٹوکیو کبھی بھی ایران کے ساتھ معاہدے کا حصہ نہیں رہا لیکن اس کا یہ مقصد نہیں کہ وہ اس سے متاثر نہیں ہے۔

جاپان ایران سے تیل درآمد کیا کرتا تھا۔ تازہ امریکی اقتصادی پابندیوں کے بعد اس نے واشنگٹن کے دباؤ کے تحت ایران سے درآمد بند کر دی۔

ٹوکیو ٹیمپل یونیورسٹی کے ڈائریکٹر آف ایشین سٹڈیز پروفیسر جیف کنگسٹن کہتے ہیں کہ ’جاپان 2015 کے معاہدہ کی حمایت کرتا ہے اور اس بات سے ناخوش ہے کہ امریکہ نے اس سے ہاتھ کھینچا ہے اور اس کے خیال میں واقعی یہ ایک بڑی غلطی ہے۔‘

’لیکن یہ معاملہ اس کے بس میں نہیں ہے، اس لیے جیسے ہی امریکہ نے پابندیاں لگائیں تو اس میں کچھ حیرت کی بات نہیں کہ جاپان نے بھی وہی کیا۔‘

اگرچہ ابھی جاپان ایرانی تیل کے بغیر بھی گزارا کر سکتا ہے لیکن مشرقے وسطیٰ میں کوئی بھی لڑائی تیل کی قیمتوں میں اضافہ کر دے گی اور جاپان پر اس کا کافی اثر پڑے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption شانزو آبے اور ڈونلڈ ٹرمپ نے اس ماہ کے آغاز میں ٹوکیو میں ملاقات کی تھی

کیا جاپان ایران اور امریکہ کے درمیان ثالثی کرا سکتا ہے؟

مبصرین نہیں سمجھتے کہ شنزو آبے کچھ فرق لا سکتے ہیں۔

ٹوکیو کے انسٹیٹیوٹ آف کنٹیمپریری ایشئن سٹڈیز کے سربراہ پروفیسر رابرٹ دوجارک کہتے ہیں کہ ’میرے مطابق ایران اور امریکہ میں کسی معاہدے کو لائے جانے کے امکانات صفر ہیں۔‘

پروفیسر کنگسٹن کہتے ہیں کہ اگرچہ مغرب کے برعکس ایران کے معاملے میں جاپان کسی بھی قسم کی تاریخی اور مذہبی بندوشوں سے آزاد ہے، تہران ابھی بھی شنزو آبے کو ایک ایماندار نمائندے کے طور پر نہیں دیکھتا۔

ایک اچھا ثالث وہ ہوتا ہے جسے دونوں فریق غیر جانبدار سمجھیں لیکن شنزو آبے اور ڈونلڈ ٹرمپ کی ابھی جاپان میں ملاقات ہوئی ہے اور کافی عرصے سے وہ ایک دوسرے کی دوستی کے گن گاتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption ٹرمپ نے امریکہ کی سفارت کاری کو اس کے بعض قریبی اتحادیوں سے تصادم کے موڑ پر لا کھڑا کیا ہے

—–Shared for Information Purpose Only—-

You must be logged in to post a comment Login